Describe the features of journalistic language

Journalism:

Describe the features of journalistic language Journalism is derived from the Arabic word “sahaf” which can be taken to mean page or magazine. Journalism in English is derived from the journal, meaning daily arithmetic or diary. Journalism is the process of researching any issue or reaching out to the audience, provided there is an element of honesty and sincerity in the whole process. Journalism is about guiding people. Journalism is the name of making the public aware of the facts through comments.

What’s the news This question has been answered since the beginning of newspapers. But the news was even earlier but the means of receiving and delivering it were different. However, different people have given different answers to this question. Everyone appreciates it according to their point of view. Dr. Abdul Salam Khurshid while discussing the issue of the definition of news has written that news is related to events and observations which are out of the ordinary. News is defined as news that is usually a report that has not reached the general public before. This report is about such activities of mankind.

In recent times, the pace of life has become much faster. The engagements of people and properties have increased. Many new and purposeful things have been added to his life and the opportunity has disappeared. Now very few people have enough time to read the whole newspaper from A to Z with full concentration and attention. Most people take a cursory look at the newspaper and find the news or content that interests them and read it carefully. Therefore, in view of the engagement and needs of the readers, it has become necessary to present the material in such a way that the reader can find the material of his interest as soon as possible and easily.

Journalism has now expanded beyond a limited number of readers. Now the information given through newspapers and magazines is related to the whole world. Therefore, the power of journalism is increasing along with its sphere of influence. Now millions of people use newspapers. In this way, journalism influences the opinion of millions, not millions, of people, which gives a good idea of ​​its universal power. Political awareness is achieved through political awareness and training. Newspapers inform people about the virtues of good leadership. Debate plays an important role in the promotion of democracy in any country. Newspapers are an important medium for the exchange of ideas and thoughts and also for the freedom of writing. Journalism plays a central role in promoting the democratic process by consciously persuading readers against the dictatorial system.

This is the age of competition and moving forward. The race is on in the newspapers. In addition to the competition between newspapers, they also compete with other media such as radio and TV. Therefore, in this race of competition, only those newspapers can be successful which will not only be ahead of each other and other media in terms of volume and diversity of content but also beat others in content presentation. Therefore, in this atmosphere of competition and competition, the race is on to make the newspapers more attractive not only spiritually but also outwardly.

Naturally, every human being has a substance of curiosity and he tries his best to keep himself aware of his surroundings. A person who is ignorant will never be able to progress. That is why man is always looking for resources that can help him to keep abreast of the situation. It is the primary duty of the newspapers to convey as much information as possible to satisfy human curiosity.

Today’s electronic media has expanded so much that everyone is aware of the news. Many television channels in the world now operate only as news channels and broadcast news every hour. Along with most of the news and commentary, there is also breaking news. Due to the rapid development of different types of journalism, knowledge of news is no longer limited to books, journalists, and classrooms. Even after all this, today, general awareness of the news is one thing, and understanding the news in a scientific manner is another. Wherever in the world the teaching and learning of journalism or communication is organized, the process of understanding “news” begins with the definition of news.

As far as journalistic content is concerned, without it, the existence of a newspaper is negated. In the early days of journalism in almost every country, most of the material did not consist of news and their commentary but of thoughts and ideas and there was absolutely no need to present it in a charming and beautiful way. As times changed, so did the nature of journalistic content. Journalism became independent. Democracy was established in the world. The need to be aware of the surroundings increased. As a result of this need, the job of newspapers was not only to convey ideas and opinions to the people but also to keep them informed about the situation and events and their background and consequences. Journalistic material became more and more popular, and as a result, the quality and quality of the material, as well as the way it was presented, became important.

Journalism became so popular that the pages of newspapers grew. In the early days of journalism, newspapers were small and content was scarce. At that time, for the convenience of the readers, it was not necessary to highlight different parts of the content, but now due to the inflation of the content, it was felt necessary to highlight each and every part of the content separately. In an eight-ten-twenty-five-page newspaper, it becomes difficult to read if the content is not highlighted in the headlines, sub-headings, and footnotes. Many newspapers publish regional news. Then they are arranged with partial headlines so that the reader does not have any difficulty in finding and reading the news of his interest.

The news produced with diligence and diligence is constructive and useful. Suppose there is news of some people dying collectively somewhere. A newspaper is satisfied after publishing this news that it has fulfilled its duty by providing news to the readers.

صحافتی زبان کی خصوصیات بیان کریں

صحافت

صحافت عربی زبان کے لفظ ’’صحف‘‘ سے ماخوذ ہے جس کا مفہوم صفحہ یا رسالہ اخذ کیا جا سکتا ہے۔ انگریزی میں جرنلزم، جرنل سے ماخوذ ہے یعنی روزانہ کا حساب یا روزنامچہ۔ صحافت کسی بھی معاملے کے بارے میں تحقیق یا پھر سامعین تک پہنچانے کے عمل کا نام ہے بشرطیکہ اس سارے کام میں نہایت ایمانداری اور مخلص پن کا عنصر ضرور موجود ہو۔ صحافت نام ہے لوگوں کی رہنمائی کرنے کا۔ صحافت نام ہے تبصروں کے ذریعہ عوام الناس کو حقائق سے روشناس کرانے کا۔

خبر کیا ہے؟ اس سوال کا جواب اس وقت سے دیا جا رہا ہے جب سے اخبارات کا آغاز ہوا ہے۔ لیکن خبریں تو اس سے قبل بھی ہوتی تھیں مگر انہیں حاصل کرنے اور پہنچانے کے ذرائع مختلف تھے۔ تاہم مختلف لوگوں نے اس سوال کے مختلف جواب دئیے ہیں۔ ہر شخص اپنے نقطہ نظر کے مطابق اس کی تعریف کرتا ہے۔ ڈاکٹر عبدالسلام خورشید نے خبر کی تعریف کے مسئلے پر بحث کرتے ہوئے لکھا ہے کہ خبر کا تعلق ایسے واقعات اور مشاہدات سے ہوتا ہے جو معمول سے ہٹ کر ہوں۔ خبر کی یہ تعریف یوں کی گئی ہے کہ خبر عموماً وہ رپورٹ ہوتی ہے جو اس سے پہلے عام لوگوں کو نہیں ہوتی۔ یہ رپورٹ بنی نوع انسان کی ایسی سرگرمیوں کے متعلق ہوتی ہے ۔

حالیہ دور میں زندگی کی رفتار بہت تیز ہو گئی ہے۔ عوام و خواص کی مصروفیات بڑھ گئی ہیں۔ ان کی زندگی میں کئی نئی با مقصد اور بے مقصد چیزیں شامل ہو گئی ہیں کہ فرصت ناپید ہو گئی ہے۔ اب بہت کم لوگوں کے پاس اتنا وقت ہوتا ہے کہ وہ پورے انہماک اور توجہ کے ساتھ الف سے ي تک سارا اخبار پڑھ سکیں۔ بیشتر لوگ اخبار پر سرسری نگاہ ڈال کر اپنی دلچسپی کی خبریں یا مواد تلاش کرتے ہیں اور صرف اسی کو غور سے پڑھتے ہیں۔ چنانچہ قارئین کی اس مصروفیت اور ضروریات کے پیش نظر بھی ضروری ہو گیا ہے کہ مواد اسی انداز سے پیش کیا جائے کہ قاری جلد سے جلد اور آسانی کے ساتھ اپنی دلچسپی کا مواد تلاش کر لے۔

صحافت اب محدود تعداد کے قارئین سے نکل کر انتہائی وسعت اختیار کر چکی ہے۔ اب اخبارات و رسائل کے ذریعے جو معلومات دی جاتی ہیں وہ پوری دنیا سے متعلق ہوتی ہیں۔ اس لئے صحافت کی طاقت بھی اسی کے حلقہ اثر کے ساتھ ساتھ بڑھ رہی ہے اب اخبارات سے کروڑوں لوگ استفادہ کرتے ہیں۔ اس طرح صحافت لاکھوں نہیں کروڑوں لوگوں کی رائے کو متاثر کرتی ہے جس سے اس کی ہمہ گیر قوت کا اندازہ بخوبی کیا جا سکتا ہے۔ سیاسی شعور اور تربیت کی بدولت سیاسی بیداری حاصل ہوتی ہے۔ اخبارات اچھی قیادت کی خوبیوں سے لوگوں کو آگاہ کرتے ہیں۔ بحث و مباحثہ کسی بھی ملک میں جمہوریت کے فروغ کے لئے اہم کردار ادا کرتا ہے۔ اخبارات نظریات و خیالات کے تبادلے کا اہم ذریعہ ہوتے ہیں اور آزادی تحریر کے علمبردار بھی۔ آمرانہ نظام کے خلاف شعوری طور پر قارئین کو آمادہ کر کے جمہوری عمل کے فروغ کے لئے صحافت مرکزی کردار ادا کرتی ہے۔

یہ مقابلہ اور آگے بڑھنے کا دور ہے۔ اخبارات میں مقابلے کی دوڑ جاری ہے۔ علاوہ ازیں اخبارات کے باہمی مقابلے کے علاوہ ان کا دوسرے ذرائع ابلاغ ریڈیو اور ٹی وی وغیرہ سے بھی مقابلہ ہے۔ چنانچہ مقابلے کی اس دوڑ میں وہی اخبار کامیاب رہ سکتے ہیں جو نہ صرف مواد کے حجم اور تنوع میں ایک دوسرے سے اور دوسرے ذرائع ابلاغ سے سبقت لے جائیں بلکہ مواد کی پیشکش میں بھی دوسروں کو مات دے دیں۔ لہٰذا مقابلہ و مسابقت کی اس فضا میں اخبارات کو نہ صرف معنوی اعتبار سے بلکہ ظاہری اعتبار سے بھی زیادہ سے زیادہ پرکشش بنانے کی دوڑ جاری ہے۔

فطری طور پر ہر انسان میں تجسس کا مادہ پایا جاتا ہے اور وہ اپنے آپ کو ارد گرد کے ماحول سے آگاہ رکھنے کی ہر ممکن کوشش کرتا ہے۔ جو انسان جاہل ہو گا وہ کبھی بھی ترقی نہیں کرسکے گا۔ اس لئے انسان ذرائع کا متلاشی رہتا ہے جو اس کو حالات سے باخبر رکھنے میں اس کی مدد کرسکیں۔ اخبارات کا یہ بنیادی فریضہ ہے کہ وہ انسان کے تجسس کے جذبے کی تسکین کے لئے زیادہ سے زیادہ معلومات اس تک پہنچائیں۔

عصر حاضر کے برقیاتی ذرائع ابلاغ میں اتنی وسعت پیدا ہو چکی ہے کہ ہر کوئی خبروں سے باخبر ہے۔ دنیا میں متعدد ٹیلی ویژن چینل اب صرف خبری چینل کے طور پر کام کر رہے ہیں اور ہر ساعت خبریں نشر کرتے ہیں۔ اکثر و بیشتر خبروں اور تبصروں کے ساتھ ساتھ بریکنگ نیوز یعنی تازہ ترین خبریں بھی ملتی رہتی ہیں۔ صحافت کی مختلف انواع کی ترقی بسیط کے باعث اب خبر کا علم کتابوں ، صحافیوں اور کلاس رومز کی حد تک محدود نہیں رہا۔ اتنا سب کچھ ہونے کے بعد بھی آج خبر کے بارے میں عمومی آگاہی الگ چیز ہے اور خبر کو باقاعدہ علمی انداز میں سمجھنا مختلف بات ہے۔ دنیا میں جہاں بھی صحافت یا ابلاغیات کی تعلیم و تدریس کا اہتمام ہے وہاں ’’خبر‘‘ کو سمجھنے کا عمل خبر کی تعریف کے تعین سے شروع ہوتا ہے۔

جہاں تک صحافتی مواد کا تعلق ہے اس کے بغیر تو اخبار کے وجود کی نفی ہوتی ہے۔ تقریباً ہر ملک کی صحافت کے ابتدائی دور میں بیشتر مواد خبروں اور ان کے تبصروں پر نہیں بلکہ خیالات و نظریات پر مشتمل ہوتا ہے اور اس کو دلکش و خوبصورت انداز میں پیش کرنے کی قطعی ضرورت نہیں ہوتی تھی۔ زمانہ بدلنے کے ساتھ ساتھ صحافتی مواد کی نوعیت بھی تبدیل ہوتی گئی۔ صحافت آزاد ہوئی۔ دنیا میں جمہوری نظام قائم ہوا۔ گرد و پیش سے باخبر رہنے کی ضرورت بڑھ گئی۔ اسی ضرورت کے نتیجے میں اخبارات کا کام لوگوں تک صرف خیالات و نظریات پہنچانا نہ رہا بلکہ ان کو حالات و واقعات سے اور ان کے پس منظر و نتائج سے باخبر رکھنا بھی ہو گیا۔ صحافتی مواد کی افراط ہو گئی اور اسی کے نتیجے میں اس مواد کی نوعیت و معیار کے ساتھ ساتھ اس کے خوبصورت و دلکش طریقہ پیشکش کی ہیئت نے بھی اہمیت اختیار کر لی۔

صحافتی مواد کی اتنی افراط ہو گئی کہ اخبارات کے صفحات میں اضافہ ہوا۔ صحافت کے ابتدائی دور میں اخبارات چھوٹے ہوتے تھے اور مواد تھوڑا۔ اس وقت قارئین کی آسانی کے لئے مواد کے مختلف حصوں کو نمایاں کر کے پیش کرنے کی ضرورت نہیں ہوتی تھی مگر اب مواد کی افراط کے باعث اس کے ہر جز کو الگ طور پر نمایاں کرنے کی ضرورت محسو س ہونے لگی۔ آٹھ دس بیس پچیس صفحات کے اخبار میں اگر مواد کو سرخیوں ، ذیلی سرخیوں اور حاشیوں میں نمایاں کر کے نہ دیا جائے تو اسے پڑھنا مشکل ہو جاتا ہے۔ کئی اخبار علاقہ وار خبریں شائع کرتے ہیں۔ پھر انہیں جزوی سرخیوں کے ساتھ ترتیب دیتے ہیں تاکہ قاری کو اپنی دلچسپی کی خبریں تلاش کر کے پڑھنے میں کوئی دقت پیش نہ آئے۔

محنت اور مستعدی سے تیار کی جانے والی خبریں تعمیری اور مفید ہوتی ہیں۔ فرض کیجئے کسی جگہ اجتماعی طور پر کچھ لوگوں کے مرنے کی خبر آتی ہے۔ ایک اخبار یہ خبر شائع کر دینے کے بعد مطمئن ہو جاتا ہے کہ اس نے قارئین کو خبر فراہم کر کے اپنا فرض پورا کر دیا ہے۔

Leave a Reply